کرتار پور راہداری: برسوں بعد بچھڑے بھائی مل گئے

تقسیم کی وجہ سے 74 سال کی علیحدگی کے بعد، کرتار پور راہداری ہندوستان اور پاکستان میں رہنے والے دو بھائیوں کے لیے دوبارہ ملاپ کا ذریعہ بن گئی۔

پاکستانی پنجاب اور انڈین پنجاب سے تعلق رکھنے والے دو بھائی 74 برس تک بچھڑے رہنے کے بعد کرتارپور میں ملے تو یہ منظر بہت سی آنکھیں نم کر گیا ذرائع کے مطابق محمد صدیق، جن کی عمر اب 80 سال ہے، پاکستانی شہر فیصل آباد میں رہائش پذیر ہیں اور تقسیم کے دوران اپنے خاندان سے الگ ہو گئے تھے۔ اس کا بھائی، حبیب عرف شیلا، بھارتی پنجاب میں رہتا ہے، اور پاکستان کے کرتار پور کوریڈور کے ذریعے ایک ملاقات کے بعد دونوں کو دوبارہ ملایا گیا۔

سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو شیئر کی گئی جس میں آنسو بھری کی ایک ویڈیودکھائی گئی۔ اس ویڈیو میں 2 بزرگ بھائیوں کو ایک دوسرے سے گلے لگاتے دکھایا گیا ہے۔ بھائیوں کے اپنے اپنے گھروں کو واپس آنے سے چند گھنٹے قبل جذباتی ملاقات جاری رہی۔ دو بھائیوں میں سے بڑے، صدیق خان، تقسیم کے وقت آٹھ یا نو سال کے تھے، اور اس وقت پاکستان میں بوگراں گاؤں (نزد فیصل آباد) میں رہتے ہیں۔ بھائیوں کی علیحدگی کے وقت شیکا خان صرف ایک چھوٹا بچہ تھا اور اب وہ پنجاب کے بھٹنڈا کے گاؤں پھولے والا میں مقیم ہے۔ دوبارہ ملنے کے بعد ہی شیکا خان کو معلوم ہوا کہ اس کا دیا ہوا نام دراصل حبیب خان ہے۔

ان تمام سالوں کے بعد دونوں بھائیوں کی ملاقات کی جذباتی ویڈیو نے دنیا بھر کے پنجابیوں کے دلوں کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے، جن میں سے کچھ کو آج بھی وہ دردناک تقسیم یاد ہے جس نے دو قوموں کو جنم دیا اور دو پنجاب بھی بنائے۔ جغرافیائی سیاسی تقسیم کے باوجود، بھائی ایک ہی بولی کا استعمال کرتے ہوئے، پنجابی میں ایک دوسرے کے ساتھ بالکل بات چیت کر سکتے تھے۔ صدیق خان، جو ان دونوں میں سے اکلوتا ہے جس نے ایک خاندان شروع کیا ہے، اپنے بچوں، بہوؤں، اور پوتوں کو بھی حبیب سے ملوایا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.