پاکستان کے ترقی نہ کرنے کی بڑی وجہ سیاسی عدم استحکام اور پالیسیوں کا عدم تسلسل ہےـ احسن اقبال

وفاقی وزیر احسن اقبال کا کہنا ہے کہ اگر کوئی کہتا ہے کہ پاکستان کی قوم کرپشن کی وجہ سے ترقی نہیں کر سکی تو غلط ہے، پاکستانی قوم اتنی ہی کرپٹ ہے جنتی دنیا کی دوسری قومیں ہیں۔ ترقی نا کرنے کے پیچھے سیاسی عدم استحکام اور پالیسیوں کا عدم تسلسل ہے۔

اسلام آباد میں نجی سرمایہ کاری اور سی پیک سے فوائد رپورٹ کی لانچنگ کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے احسن اقبال نے کہا کہ سیاسی عدم استحکام سے ملک میں ترقی نہیں ہوسکتی، سوچنا ہو گا کہ کیا ہم نے اہداف پورے کیے؟ کیا وجہ ہے کہ دیگر ممالک ہم سے آ گے نکل گئے؟ انہوں نے کہا کہ بحیثیت قوم بیماری کی تشخیص درست کی تو علاج بھی درست ہو جائے گا، بے یقینی، محاذ آرائی سے قیامت تک بیرونی سرمایہ نہیں آ سکتا، معیشت میں استحکام آتا ہے تو درآمدات بڑھنے سے ادائیگیوں میں استحکام نہیں رہتا۔

وفاقی وزیر نے مزید یہ بھی کہا کہ سی پیک 2013ء میں کاغذ کا ٹکڑا تھا، چین نے پاکستان میں اس وقت سرمایہ کاری کی جب مقامی سرمایہ کار سرمایہ کاری کو تیار نہ تھے، یورپ اور امریکا سمیت کوئی ملک بھی پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے کو تیار نہیں تھا۔ ان کا کہنا ہے کہ 5 سال میں چین سے 29 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری آئی، تھر کے کوئلے سے 400 سال کے لیے بجلی پیدا کی جا سکتی ہے، تھر کول پاکستان کا سب سے سستا انرجی پیدا کرنے والا منصوبہ ہے۔

مسلم لیگ ن کے رہنما نے کہا کہ چین نے تھر کول میں آ کر سرمایہ کاری کی، 2013ء میں انفرااسٹرکچر اور انرجی کے مسائل کا سامنا تھا، سی پیک صرف بجلی اور انفرااسٹرکچر کا منصوبہ نہیں، یہ اسٹریٹجک منصوبہ ہے۔

احسن اقبال کا مزید کہنا ہے کہ 2020ء سے 2025ء تک 5 اقتصادی زون بنا کر چینی صنعت کو ری لوکیٹ کرنا تھا، گزشتہ حکومت نے 2 سال میں سی پیک میں خرابیاں نکالیں۔ لیگی رہنما کا یہ بھی کہنا ہے کہ ہمیں اقتصادی قوم بننا ہوگا، سیاسی استحکام اور پالیسیوں میں تسلسل سے ہی معاشی ترقی ہو سکتی ہے، ہمیں ٹیکس ٹو جی ڈی پی کو بڑھانا ہو گا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.